عوام نے اپنا فیصلہ پی ڈی ایم کے حق میں سنا دیا ہے، پورے مالاکنڈ کی آواز پاکستان کے کونے کونے میں جا رہی ہے “گو سلیکٹڈ گو”: بلاول بھٹو زرداری

اسلام آباد(12جنوری2021): پاکستان پیپلزپارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے بٹ خیلہ، مالاکنڈ میں پی ڈی ایم کی ایک عظیم الشان ریلی سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ عوام نے ریفرنڈم کر کے اپنا فیصلہ پی ڈی ایم کے حق میں سنا دیا ہے اور پورے مالاکنڈ کی آواز پاکستان کے کونے کونے میں جا رہی ہے کہ “گو سلیکٹڈ گو”۔

انہوں نے کہا کہ مالاکنڈ اور کے پی کے عوام اس نالائق، نااہل اور ناجائز حکمرانوں کو سات سالوں سے بھگت رہی ہے۔ یہاں کے عوام کو پتہ ہے کہ حکمرانوں کا یہ ٹولہ جھوٹا، منافق اور دھوکے باز ہے۔ اس نے جو بھی وعدہ کیا وہ جھوٹ نکلا۔ انہوں نے کہا کہ شہید ذوالفقار علی بھٹو نے مالاکنڈ میں کھڑے ہو کر عوام سے وعدہ کیا تھا کہ وہ ایف سی آر کا خاتمہ کریں گے اور انہوں نے یہ کر کے دکھا دیا۔
مالاکنڈ کے عوام نے ہمیشہ پیپلزپارٹی کے ساتھ مل کر جدوجہد کی ہے اور غاصبوں سے اپنے حقوق چھینے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ وہ مالاکنڈ کے عوام سے وعدہ کر رہے ہیں کہ وہ اس کٹھ پتلی حکومت کو بھگائیں گے اور ایک حقیقی جمہوری راج قائم کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ مالاکنڈ کے بہادر عوام نے بہادری کے ساتھ دہشتگردوں کا مقابلہ کیا اور انہیں بھگا دیا۔ مالاکنڈ کے عوام نے شہادتیں قبول کی ہیں اور کبھی بھی کٹھ پتلی کے سامنے سر نہیں جھکائیں گے۔ شہید بینظیر بھٹو نے کہا کہ پاکستان کے عوام سوات میں پاکستانی جھنڈا لہرائین گے اور مالاکنڈ کے عوام نے دہشتگردوں کو بھگا کر سوات میں پاکستانی جھنڈا لہرا دیا۔ سب کو یاد ہے کہ اس وقت کون دہشتگردوں کے ساتھ کھڑا تھا۔ بزدل عمران خان اس وقت دہشتگردوں کے ساتھ تھا اور دہشتگردوں کا وکیل بنا ہوا تھا۔ عمران خان چاہتا تھا کہ خیبرپختونخواہ میں دہشتگردوں کا دفتر کھلے لیکن یہاں کے عوام نے عمران کو شکست دی۔ پاکستان کے عوام کو ابھی تک اے پی ایس کا واقعہ نہیں بھولا جس وقت دہشتگرد بچوں کو شہید کر رہے تھے عمران خان آبپارہ میں ڈانس کر رہا تھا۔ عمران خان پہلے بھی بزدل تھا اور آج بھی بزدل ہے۔ اس نے جیل سے احسان اللہ احسان کو رہا کر دیا اور اسے بھگا دیا۔ عمران ہمیشہ بزدلی دکھاتا ہے۔ ہزارہ مزدوروں کے ساتھ دہشتگردی ہوئی اور وہ کہہ رہے تھے ہزارہ برادری کو جینے کا حق دو لیکن عمران خان نے ان شہیدوں کو انصاف نہیں دیا۔ عمران خان ان شہیدوں کے پاس تعزیت کے لئے بھی نہیں گیا اور جب وہ کوئٹہ گیا تو اس نے شہیدوں کے ایک خاندان کو تعزیت کے لئے اپنے پاس بلوایا۔ عمران خان نے کسی کے ساتھ انصاف نہیں کیا۔ عمران خان نے نہ اے پی ای ایس کے بچوں کے ساتھ، بلور خاندان کے ساتھ اور میاں افتخار کے ساتھ انصاف نہیں کیا۔ بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ جب تک ہم دہشتگردوں کو نہیں پکڑتے ہم بحیثیت قوم شرمندہ ہوتے رہیں گے۔ عمران خان نے ہمارے عوام کا خون سستا کر دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس کٹھ پتلی وزیراعظم نے معیشت تباہ کر دی ہے، ہر چیز مہنگی کر دی ہے، چینی، آٹا، دوائیاں، بجلی، گیس، پٹرول الغرض یہ کہ ہر قسم کی چیزیںکی قیمتی آسمان سے باتیں کر رہی ہیں۔ پاکستان کی معاشی شرح نمومنفی ہے اور پورے علاقے میں کم ہے۔ ہماری شرح نمو افغانستان سے بھی کم ہے اس لئے کہ پاکستان پر اس سلیکٹڈ کو مسلط کر دیا گیا ہے۔ پرسوں پورے ملک کو اندھیرے میں دھکیل دیا گیا۔ یہ اس لئے ہوا کہ عمران نالائق اور کرپٹ ہے۔ عمران سے ملک نہیں چل رہا۔ ایک کروڑ نوکریاں اور پچاس لاکھ گھروں کا وعدہ کرکے اس نے لاکھوں لوگوں کو بیروز کر دیا اور عوام سے انکروچمنٹ کے نام پر ان کے گھر مسمار کر دئیے گئے۔ عمران خان نے 90روز میں کرپشن کے خاتمے کا وعدہ کیا تھا جبکہ اس وقت ملک میں تاریخ کی سب سے زیادہ کرپشن ہو رہی ہے چاہے وہ مالم جبہ ہو، بی آرٹی ہو، بلین ٹری منصوبہ ہو، علیمہ باجی کی سلائی مشین ہو یا پاپا جان کا پیزا۔ ٹرانسپرنسی انٹرنیشنل کا کہنا ہے کہ اس وقت پاکستان میں ریکارڈ کرپشن ہو رہی ہے۔ بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ جب تک سب کے لئے ایک قانون نہیں ہوگا چاہے وہ سیاستدان ہوں یا بیوروکریٹس یا جج ہو یا جرنل اس وقت تک احتساب بے معنی رہے گا۔ بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ ہم کے پی کے عوام کے حقوق عمران خان کو نہیں چھیننے دیں گے، کے پی کے عوام کو این ایف سی کے 160ارب نہیں دئیے گئے، کے پی کے عوام کے گیس اور بجلی سے محروم رکھا جا رہا ہے۔ فاٹا کو کے پی میں ضم کرنے کی بجائے کے پی کو فاٹا میں ضم کر دیا گیا ہے۔ یہاں نوجوان پراسرار انداز میں غائب کئے جا رہے ہیں۔ کے پی کے عوام کی قسمت یہ نہیں لکھا کہ یہ ہمیشہ غریب رہیں گے۔ یہ وہ جمہوریت نہیں بلکہ یہ ہمارے لیڈروں نے قربانیاں دی تھیں۔ عوام کا مستقبل اس وقت تک بہتر اور روشن نہیں ہوگا جب تک عوام اپنے فیصلے خود نہیں کریں گے۔ اس کے بعد بلاول بھٹو زرداری عوام سے نعرے لگوائے، “ووٹ پر ڈاکہ نہ منظور، جمہورپر ڈاکہ نامنظور، دستور پر ڈاکہ نا منظور، جیب پر ڈاکہ نا منظور اور پاکستان پر ڈاکہ نامنظور”۔ بٹ خیلہ جاتے ہوئے ریلی میں سخاکوٹ کے مقام پر اپنے مختصر خطاب میں بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ وہ آج وہ خوشی محسوس کر رہے ہیں کیونکہ وہ مالاکنڈ کے عوام کے درمیان ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کٹ پتلی حکومت کے خاتمے کے لئے جیالے نکل پڑے ہیں۔ اس حکومت کی الٹی گنتی شروع ہو چکی ہے۔ آپ نے ہمیشہ پیپلزپارٹی کا ساتھ دیا ہے اور دے رہے ہیں۔ درگئی پھاٹک کے مقام پر بلاول بھٹو زرداری نے مختصر خطاب کرتے ہوئے کہا کہ مالاکنڈ کے عوام نے شہید ذوالفقار علی بھٹو اور شہید محترمہ بینظیر بھٹو کا ساتھ دیا تھا اور اب وہ میرا ساتھ بھی دے رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ مالاکنڈ کے عوام بہادر ہیں اور انہوں نے دہشتگردوں کا ڈٹ کر مقابلہ کیا اب مالاکنڈ کے عوام نے اس نااہل، نالائق اور ناجائز وزیراعظم کو بھگانا ہے۔ انہوں نے کہا کہ لانگ مارچ ہوگا اور اس کٹھ پتلی کو بھگائیں گے اور غریبوں کے لئے عوامی حقیقی جمہوریت قائم کریں گے۔

50% LikesVS
50% Dislikes

Leave a Reply

Please Login to comment
  Subscribe  
Notify of
%d bloggers like this: